Surah Jumua in Roman English

Surah Jumua in Roman English

 

Bismillaahir Rahmaanir Raheem

  1. Yusabbihu lilaahi maa fis samaawaati wa maa fil ardil Malikil Quddoosil ‘Azeezil Hakeem
  2. Huwal lazee ba’asa fil ummiyyeena Rasoolam min hum yatloo ‘alaihim aayaatihee wa yuzakkeehim wa yu’allimuhumul Kitaaba wal Hikmata wa in kaanoo min qablu lafee dalaalim mubeen
  3. Wa aakhareena minhum lammaa yalhaqoo bihim wa huwal ‘azeezul hakeem
  4. Zaalika fadlul laahi yu’teehi many-yashaaa; wallaahu zul fadlil ‘azeem
  5. Masalul lazeena hum milut tawraata summa lam yahmiloohaa kamasalil himaari yah milu asfaaraa; bi’sa masalul qawmil lazeena kaazzaboo bi aayaatil laah; wallaahu laa yahdil qawmazzaalimeen
  6. Qul yaaa ayyuhal lazeena haadoo in za’amtum annakum awliyaaa’u lilaahi min doonin naasi fatamannawul mawta in kuntum saadiqeen
  7. Wa laa yatamannaw nahooo abadam bimaa qaddamat aydeehim; wallaahu ‘aleemum biz zaalimeen
  8. Qul innal mawtal lazee tafirroona minhu fa innahoo mulaaqeekum summa turaddoona ilaa ‘Aalimil Ghaibi wash shahaadati fa yunabbi’ukum bimaa kuntum ta’maloon
  9. Yaaa ayyuhal lazeena aamanoo izaa noodiya lis-Salaati miny yawmil Jumu’ati fas’aw ilaa zikril laahi wa zarul bai’; zaalikum khayrul lakum in kuntum ta’lamoon
  10. Fa-izaa qudiyatis Salaatu fantashiroo fil ardi wabtaghoo min fadlil laahi wazkurul laaha kaseeral la’allakum tuflihoon
  11. Wa izaa ra’aw tijaaratan aw lahwanin faddooo ilaihaa wa tarakooka qaaa’imaa; qul maa ‘indal laahi khairum minal lahwi wa minat tijaarah; wallaahu khayrur raaziqeen

 

 

Surah Jumua in Roman English
Surah Jumua Page 1

 

 

Surah Jumua in Roman English
Surah Jumua Page 2

 

وہ کمال حسن حضور ہے کہ گمان نقص جہاں نہیں​
یہی پھول خار سے دور ہے یہی شمع ہے کہ دھواں نہیں​

دو جہاں کی بہتریاں نہیں کہ امانی ٴ دل و جاں نہیں​
کہو کیا ہے وہ جو یہاں نہیں مگر اک نہیں کہ وہ ہاں نہیں​

میں نثار تیرے کلام پر ملی یوں تو کس کو زباں نہیں​
وہ سخن ہے جس میں سخن نہ ہو وہ بیاں ہے جس کا بیاں نہیں​

بخدا خدا کا یہی در ہے نہیں اور کوئی مفر مقر​
جو وہاں سے ہو یہی آ کے ہو جو یہاں نہیں تو وہاں نہیں​

کرے مصطفی کی اہانتیں کھلے بندوں اس پہ یہ جراتیں​
کہ میں کیا نہیں ہوں محمدی ارے ہاں نہیں ارے ہاں نہیں​

ترے آگے یوں ہیں دبے لچے فصحا عرب کے بڑے بڑے​
کوئی جانے منہ میں زباں نہیں نہیں بلکہ جسم میں جاں نہیں​

وہ شرف کہ قطع ہیں نسبتیں وہ کرم کہ سب سے قریب ہیں​
کوئی کہہ دو یاس و امید سے وہ کہیں نہیں وہ کہاں نہیں​

یہ نہیں کہ خلد نہ ہو وہ نکو وہ نکوئی کی بھی ہے آبرو​
مگر اے مدینہ کی آرزو جسے چاہے تو وہ سماں نہیں​

ہے انہیں کے نور سے سب عیاں ہے انہیں کے جلوہ میں سب نہاں​
بنے صبح تابش مہر سے رہے پیش مہر یہ جاں نہیں​

وہی نور حق وہی ظل رب ہے انہیں سے سب ہے انہیں کا سب​
نہیں ان کی ملک میں آسماں کہ زمیں نہیں کہ زماں نہیں​

وہی لامکاں کے مکیں ہوئے سر عرش تخت نشیں ہوئے​
وہ نبی ہے جس کے ہیں یہ مکاں وہ خدا ہے جس کا مکاں نہیں​

سر عرش پر ہے تری گزر دل فرش پر ہے تری نظر​
ملکوت و ملک میں کوئی شے نہیں وہ جو تجھ پہ عیاں نہیں​

کروں تیرے نام پہ جاں فدا نہ بس ایک جاں دو جہاں فدا​
دو جہاں سے بھی نہیں جی بھرا کروں کیا کروڑوں جہاں نہیں​

ترا قد تو نادر دہر ہے کوئی مثل ہوتو مثال دے​
نہیں گل کے پودوں میں ڈالیاں کہ چمن میں سرو چماں نہیں​

نہیں جس کے رنگ کا دوسرا نہ تو ہو کوئی نہ کبھی ہوا​
کہو اس کو گل کہے کیا کوئی کہ گلوں کا ڈھیر کہاں نہیں​

کروں مدح اہل دول رضا پڑے اس بلا میں میری بلا​
میں گدا ہوں اپنے کریم کا میرا دین پارہٴ ناں نہیں​

(اعلحٰضرت عظیم البرکت مولانا امام احمد رضا خان بریلوی رحمت الله علیہ)​

Leave a Comment